Author - Masood

ایک پردیسی جو پردیس میں رہنے کے باوجود اپنے ملک سے بے پناہ محبت رکھتا ہے، اپنے ملک کی حالت پر سخت نالاں،۔ ایک پردسی جس کا قلم مشکل ترین سچائی لکھنے سے باز نہیں آتا، پردیسی جسکے قلم خونِ جگر کی روشنائی سے لکھتا ہے، یہی وجہ ہے کہ وہ تلخ ہے، ہضم مشکل سے ہوتی ہے، پردسی جو اپنے دل کا اظہار شاعری میں بھی کرتا ہے

بزمِ سخن

نعرۂ مستانہ

نعرۂ مستانہ میں نعرۂ مستانہ، میں شوخئ رندانہ میں نعرۂ مستانہ میں شوخئ رندانہ میں تشنہ کہاں جاؤں پی کر بھی کہاں جانا میں سوزِ محبت ہوں میں ایک قیامت ہوں میں...